کشمير سے رشته کيا ہے?لا اله الا الله –مرزافیاض احمد


15209166_344369445921754_1804568702_n
آج باغ يونيورسٹی آزاد کشميرسے جميلہ بتول کا فون آيا جميلہ ايم اے اردو کی طالبہ ہے۔اسے ايک تقرير کی تياری کے ليۓ رہنمائی چاہيے تھی۔بات چلتے چلتے مقبوضہ کشمير کے حالات پہ چل نکلی۔جميلہ اس موضوع پہ بہت کھل کر بات کر رہی تھی اس کا کہنا تھا کہ ہم کشميريوں پر بہت ظلم ہو رہا ہے انڈيں آرمی فائر کرے يا پاک آرمی مرتے دونوں طرف سے کشميری ہی هيں کسی کو کيا فرق پڑتا ہے اس سے۔ہم جنازے اٹھا اٹھا کے تھک گۓ ہيں۔

ہمارے گلشن کے ننھے پھول بن کھلے ہی مر جھا جاتے ہيں ہمارے جوان بھائی اپنی جوانی ميں سہرے کی بجاۓ کفن کاپہن ليتے ہيں۔کسی کو کوئی فرق نہيں پڑتا جميلہ نے بات کرتے کرتے سسکياں لينا شروع کر ديں اور جب کنٹرول نہ کر سکی تو رونے لگی۔بڑے بڑے مقابلوں ميں کسی کو نه بولنے دينے والا مقرر آج بے بسی سے جميلہ کی آہ و بقا سن رہا تھا۔خير جب وه تھوڑا ريلکس ہوئی تو ميں نے کہا جميله آپ کو پتہ ہے ہمارا کشمير سے رشته کيا ہے?لا اله الا الله۔۔۔۔۔

آپ کو تکليف ہوتی ہے تو پورا پاکستان آپ کے ساتھ کڑا ہوتا ہے۔همارے دل آپ کے ساتھ دھڑکتے ہيں۔ہمارے نوجوان کشميری بھائيوں کے ساتھ قدم بہ قدم اپنی جاں دينے سے بھی پيچھے نہيں ہٹتے۔زلزلے ميں پورا پاکستان آپ کے ليے تڑپ اٹھا تھا۔آپ خود کو اکيلی مت تصور کرو۔

ہمارا رشته کلمے والا رشته ہے جو آۓ روز مضبوط سے مضبوط ہوتا ہے جس دن ہميں کوئی عمر کوئی خالد قاسم ايوبی غزنوی مل گيا اس دن آپ کے سارے دکھ سارے غم دور ہو جائيں گے۔جميله پاکستان کا بچہ بچہ اپنے کشميری بھائيوں کے دکھ درد ميں برابر کا شريک ہے۔کشمير ہماری شه رگ ہے اور ہمارا الله ہماری شه رگ سے بھی قريب۔اس ليے مايوس نہيں ہونا مايوسی ذوال علم و عرفاں ہے۔


You may also like...

1 Response

  1. سلیم says:

    بہت اعلی جی۔۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *