قربانی کے جانوروں کے بائیکاٹ کی کوشش اور مخصوص ٹولہ


قربانی کے حوالے سے دوست بائیکاٹ کی بات کر رہے ہیں اور وجہ جانوروں کی بڑھتی قیمتیں اور دکھاوے کو قرار دیتے ہوئے اسی رقم کو کسی غریب کی شادی پر خرچ کرنے کی بھی بات کر رہے ہیں .
دیکھیں ایک بات تو یہ سمجھ لیں کہ فروٹ بائیکاٹ اور قربانی کے بائیکاٹ میں زمین آسمان کا فرق ہے .

فروٹ کا بائیکاٹ کرنے کی وجوہات یکسر مختلف تھیں ، اور سب سے بڑی وجہ یہی بتائی جارہی تھی کہ اگر فروٹ نا بھی کھائیں گے تو کیا فرق پڑ جانا ہے ؟ افطاری میں فروٹ کھانا کوئی مذہبی فریضہ تو ہے نہیں حتیٰ کہ فروٹ بائیکاٹ کے دوران بھی صرف کھجور پر اکتفا کرنے کا کہا گیا کہ کھجور سے نبی کریم صلی الله علیہ وسلم کی سنت وابستہ ہے لہٰذا بائیکاٹ میں کہیں بھی کھجور کا ذکر نہیں تھا .

جبکہ دوسری جانب قربانی ہمارا مذہبی فریضہ ہے ، اس کا فروٹ بائیکاٹ سے تقابل کرنا ہی سب سے بڑی زیادتی ہے .

اور یقین جانیں جو قربانی کرتے ہیں ان میں سے اکثر صدقہ خیرات بھی کرتے ہیں ، اگر کوئی بیس لاکھ کا جانور خریدنے کی استطاعت رکھتا ہے تو یقیناً وہ بیس گھروں کی مدد بھی کہیں نا کہیں ضرور کرتا ہوگا ، جہاں تک بات دکھاوے کی ہے تو یہ نیت کا ڈیپارٹمنٹ ہے جس تک دسترس محض الله کے پاس ہی ہے .

لہٰذا قربانی کی اہمیت کو ڈسکس کرنا بھی ایک طرح سے اس طبقہ کی حوصلہ افزائی ہی ہے جو ایک لاکھ کا موبائل خریدتے ا مہینے ریسٹورنٹ میں کھانا کھاتے ہوئے تو فخر محسوس کرتا ہے پر جانور کی قربانی پر اس کے دل میں چھریاں چلنا شروع ہوجاتے ہیں اور قربانی بھی وہ کہ جس کا محض ایک حصّہ ہی شخص خود رکھ سکتا ہے باقی دو حصے غریبوں اور رشتےداروں میں تقسیم ہوجاتے ہیں .

ہمیں اپنے دوستوں کی نیت اور اخلاص میں کوئی شک نہیں پر وہ ذرا احتیاط کریں کہیں ایک مخصوص ٹولہ کے لوگ انہیں جذباتی کر کے اپنا منجن نا بیچ رہے ہوں !!!


You may also like...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *