لکھاری لکھاری » میرا نقطہ نگاہ » مسٹر ملا –فضل خاں بڑیچ

ad

میرا نقطہ نگاہ میرا نقطہ نگاہ

مسٹر ملا –فضل خاں بڑیچ


مروجہ دینی و عصری تعلیمی اداروں کا انگریز کے آمد سے قبل ہندوستان میں کوئی وجود نہیں تھا
اس سے قبل ایک مولوی صاحب ہوتے تھے لوگ ان سے جاکر قرآن مجید احادیث درس نظامی حکمت سمیت فنی تعلیم لیتے تھے باقاعدہ درس گاہوں کا کوئی تصور نہیں تھا
انگریزوں نے مولوی صاحب کی معاشرے میں بے پناہ اہمیت کے توڑ کے طور پر عصری تعلیم کی بنیاد رکھی اور ہندوؤں نے اسے ہاتھوں ہاتھ لیا ملازمتیں بھی ایک پلان کے تحت صرف عصری علوم پر دسترس رکھنے والوں کو ملنے لگی
جسکا نتیجہ بھیانک نکلا مسلمان تعلیمی معاشی میدان میں پیچھے رہنے لگے اسی کو محسوس کرتے ہوئے دارلعلوم دیوبند کی بنیاد ڈالی گئی
اور سرسید احمد خان نے انگریز کے رائج کردو نظام کے تحت علی گڑھ یونیورسٹی کی بنیاد ہندوؤں سے برابری کے پیش نظر رکھی
یہ کامیاب کوششیں تھی لیکن ایک اور مشکل آن پڑی بلکہ کہا جاتا ہے انگریز لارڈ میکالے نے اسے بڑھاوا دیا
عصری اور دینی مدارس کے فارغ التحصیل مسلمانوں کے بیچ ایک خلا پیدا ہوا اور بتدریج بڑھنے لگا
اس خلا نے مسلمان کو دو طبقوں میں تقسیم کردیا لیکن جمعیت علمائے اسلام نے اس تقسیم کو محسوس کیا اور اسکو روکنے کے لیئے ایک طلبا تنظیم جمعیت طلبہ اسلام کی بنیاد ڈالی جسکا مقصد عصری و دینی طلبا کو ایک پلیٹ فارم پر لانا تھا اور ابھی تو کام بہت باقی ہے لیکن ایک چھوٹی سے مثال تصویروں کے شکل میں آپکے سامنے ہے
15219471_368993620103611_744501872753064399_n
عبدالغنی شہزاد صاحب رائٹرز گلڈ آف اسلام پاکستان کے مرکزی چیئرمین دینی مدارس سے فارغ شدہ عصری علوم پر بھی دسترس رکھتے ہیں اقراء کی صورت میں اپنے سکول کامیابی سے چلا رہے ہیں میرے لیئے استاد کا درجہ رکھتے ہیں گزشتہ دس سال سہ ہم دوست ہیں مگر مجھے امسال ہی پتا چلا کہ نہ صرف بڑیچ ہے بلکہ ہم دونوں ایک ہی شاخ کے قریبی عزیز ہیں ?
15241295_368993580103615_5716262743280056417_n
دوسرے تصویر میں پگڑی کے ساتھ حافظ محمد صدیق فاروق اچکزئی گلڈ کے مرکزی ڈپٹی جنرل سیکرٹری جن سے فیس بک کے حد تک دوستی تھی انکی ثقیل اردو دیکھ کر میں اسے ایک بور ٹائپ انسان سمجھتا تھا? لیکن جب گلڈ کے سالانہ اجلاس میں ان سے ملاقات ہوئی تو پگڑی پہننے کی وجہ سے پہچان نہیں پایا تعارف ہونے پر انھیں تصور کے برعکس انتہائی مہذب زندہ دل اور شائستہ انسان پایا کچھ لوگ پگڑی میں جچتے ہیں فاروق صاحب انھی میں سے ہیں

اور ہم متضاد تعلیمی اداروں سے وابستہ دوستوں کو یکجا کرنے پر شکریہ جمعیت طلباء اسلام ۔ شکریہ رائٹرز گلڈ آف اسلام پاکستان ۔