لکھاری لکھاری » بلاگ » ﮐﻤّﯽ لوگ اور وڈیرا راج…فیصل بشیرکشمیری

ad




ad




اشتہار




بلاگ

ﮐﻤّﯽ لوگ اور وڈیرا راج…فیصل بشیرکشمیری



حضور آپ نے وه کہانی تو سنی ہی ہوگی کہ ایک ﮔﺎﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﻤّﯽ ﮐﮯ ﮨﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺑﭽﮧ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺍ. ﻭﮦ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﺍﻭﺭ اُﺳﮑﯽ ﺷﺎﮨﺎنہ ٹهاٹھ باٹھ والی ﺯﻧﺪﮔﯽ اور اپنی کسمپرسی اور محرومیوں سے بهرپور زندگی کو دیکهتا تو ملول ہو کر رہ جاتا. اُﺱ ﻧﮯ ﺟﺐ ﺳﮯ ﺁنکهہ ﮐﮭﻮﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺵ ﺳﻨﺒﮭﺎﻻ تو ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﭨﻮﭨﮯ ﭘﮭﻮﭨﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﯾﺎ. اُﺳﮑﮯ ﻧﻨﮭﮯ ﺳﮯ ﺫﮨﻦ میں ہمیشہ یہ ﺧﻮﺍﮨﺶ اُﺑﮭﺮﺗﯽ کہ ﮐﺎﺵ اُس کی ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮭﯽ ﻧﺎﺯﻭﻧﻌﻢ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﭘﻮﺭ ﮨﻮﺗﯽ۔ اُﺳﮑﯽ ﻣﺎﮞ ﺻﺒﺢ ﺳﻮﯾﺮﮮ ﮨﯽ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﻮ ﺟﺎﺗﯽ. ﺑﺎﭖ ﺑﮭﯽ اُﻧﮩﯽ ﮐﯽ ﻧﻮﮐﺮﯼ پہ ﭼﻼ ﺟﺎﺗﺎ. بہرحال اُﺳﮑﮯ ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺸﻘﺖ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ بہ ﻣﺸﮑﻞ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﮔﺎﮌﯼ ﭼﻼ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﻩ کچھ ﺑﮍﺍ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺳﮑﻮﻝ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ. ﺟﺐ ﭘﺎﻧﭽﻮﯾﮟ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺗﻮایک خیال اﮐﺜﺮ اُسے گهیرے رکهتا کہ ﻭﻩ ﮐﯿﻮﮞ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﻧﮩﯿﮟ؟ اُﺱ ﻧﮯ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﺌﯽ بار یہ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ کہ ﻣﺎﮞ ﮨﻢ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ؟ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺎﮞ ہمیشہ ﺟﮭﮍﮎ ﮐﺮﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺘﯽ کہ ﺧﺪﺍ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭﮨﻤﯿﮟ ﮐﻤّﯽ ﮨﯽ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﻭﻩ یہ ﺟﻮﺍﺏ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ. ”ﺍﻣﺎﮞ ﺍﮔﺮ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﻣﺮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ اُﺳﮑﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﻮﻥ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﺑﻨﮯ ﮔﺎ” ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ”اُﺳﮑﺎ ﺑﮍا ﺑﯿﭩﺎ ﺟﻮ ﺍﺑﮭﯽ ﻭﻻﯾﺖ ﺳﮯ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺁﯾﺎ ﻫﮯ ﻭﻩاُﺳﮑﯽ جگہ ﻟﮯ ﮔﺎ” اُﺱ ﻧﮯ ﭘﮭﺮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ. ”ﺍﮔﺮ اُﺳﮑﺎ بڑﺍ ﺑﯿﭩﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﺮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﺲ ﮐﯽ ﺑﺎﺭﯼ ﮨﻮﮔﯽ” ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ”ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﮐﺎ اُﺱ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺑﯿﭩﺎ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ”… اُﺱ ﻧﮯ ﭘﮭﺮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ ”ﺍﮔﺮ ﻭﻩ ﺑﮭﯽ ﻣﺮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﻮﻥ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﮨﻮﮔﺎ؟ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ”اُﺱ ﮐﮯ ﺑﮭﺘﯿﺠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ”.اُﺱ ﻧﮯ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﭘﮭﺮ ﺍﺳﺘﻔﺴﺎﺭ ﮐﯿﺎ ”ﺍﮔﺮ اُﺳﮑﮯ ﺑﮭﺘﯿﺠﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﺮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﻮﻥ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﮨﻮ ﮔﺎ؟ ﻣﺎﮞ اُﺱ ﮐﺎ ﺳﻮﺍﻝ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﭨﮑﺎ ﺳﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ کہﺍﮔﺮ ﺳﺎﺭﺍ ﮔﺎﺅﮞ ﺑﮭﯽ ﻣﺮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻦ ﺳﮑﺘﺎ، ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﺗﻮ ﮐﻤّﯽ ﮐﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﻤﯽ ﮨﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﻩ یہ ﺟﻮﺍﺏ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ. قصہ المختصر ہم لوگوں نے ٹھیک اُسی ماں و بیٹے کی طرح اپنے آپ کو بچانے یا دل کو مطمعن کرنے کےلئے ہمیشہ ایک بہانہ تراش رکھا ہے کہ جو کُچھ ہوتا ہے اُس میں بس اللہ جی کی مرضی ہے. جبکہ قرآن پاک میں صاف فرُمایا گیا ہیکہ “اِن اللہ لا یغیرُ مابقوم حتیٰ یغیرُوا ما بانفسھم۔” بیشک اللہ تعالیٰ کسی قوم کی حالت کو نہیں بدلتا یہاں تک کہ وہ لوگ اپنے آپ میں خود تبدیلی پیدا کرڈالیں۔ ﺍﮔﺮ ﮨﻢ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﯽ ﺫﮨﻨﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ ﻣﻼخطہ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﻮ یہ ﺩﺭﺩﻧﺎﮎ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻋﯿﺎﮞ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ کہ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ہماﺭﮮ ﮨﺎﮞ سیاسی ﻭﮈﯾﺮﻭﮞ ﺍﻭﺭ سیاسی ﭼﻮﮨﺪﺭﯾﻮﮞ کا ہی راج ہے.ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻭﻓﮑﺮﯼ ﺍﺟﺎﺭﮦ ﺩﺍﺭﯼ ﻗﺎﺋﻢ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﭘﺮ ﻧﺴﻞ ﺩﺭ ﻧﺴﻞ ﻗﺒﻀﮧ ﺟﻤﺎ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ اور ایک عام آدمی کمی کی سی ہی زندگی گزار رہا ہے. ﺳﯿﺎﺳﯽ لٹیرے ہم عوام کو ﻧﺴﻞ ﺩﺭ ﻧﺴﻞ اپنا ﻏﻼﻡ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺼﺮﻭﻑ ﮨﯿﮟ. یہ ہم ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﮬﻮﮐﮧ ﺩﮮ ﮐﺮﺍﻗﺘﺪﺍﺭﻣﯿﮟ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺍ ﮐﺎ ﺭﺥ دیکھ ﮐﺮﺍﭘﻨﯽ ﭘﺎﺭﭨﯿﺎﮞ، ﻭﻓﺎﺩﺍﺭﯾﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﻼﻧﺎﺕ ﻭ ﺑﯿﺎﻧﺎﺕ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺳﯿﺎﺳﯽ لٹیروں کی ﺑﮭﺮﭘﻮﺭ ﮐﻮﺷﺶ ﯾﮩﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻟﻮﮒ ﺣﮑﻤﺮﺍﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﻣﻘﺪﺭ سمجھ ﮐﺮﺧﺎﻣﻮﺷﯽ سے سہتے رہیں. ﺍﺱ ﮐﮯساتھ ساتھ ﺍﻥ ﮐﯽ ﯾﮧ ﮐﻮﺷﺶ ﺑﮭﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ کہ ﻟﻮﮒ ﻋﻠﻤﯽ ﻭ ﺫﮨﻨﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﭘﺎﮨﺞ ﺍﻭﺭ ﻣﻔﻠﻮﺝ ﺭﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺻﺮﻑ ﺍﻧﮩﯽ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﻮﮞ ، ﻣﺸﻮﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺗﻔﮑﺮ ﭘﺮ ﭼﻠﯿﮟ۔ ﯾﮧ ہم ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ذہنی ﻃﻮﺭﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﮐﻤّﯽ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ اوراس طرح ہم ﺍﮔﺮ ہم لوگ ﭘﮍﮪ لکھ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﻧﻔﺴﯿﺎﺗﯽ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻏﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﮐﻤّﯽ ﮨﯽ ﺭہتے ہیں۔ جب بهی ﺍﻟﯿﮑﺸﻦ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯾﺎﮞ ﮨﻮتی ﮨﯿﮟ تو ہم سب ﮐﯽ یہ کوشش ﮨﮯ کہ ہمارا ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯاوراس طرح اُنہی چوہدریوں کو اپنے اوپر مسلط بھی ہم خود ہی کرتے ہیں. چندے آفتاب چندے مآتاب ہمارے اندراتنا ﮐﻤّﯽ پن سما چُکا ہے کہ اگر ہمارا چوہدری الیکشن کے دوران ساتھ کھڑا ہو کہ ایک تصویر تک بنوا دے تو ہم لوگ وہ تصویر فریم کروا کہ گھر میں ایسی جگہ ٹانک دیتے ہیں جہاں ہر آنے جانے والے کی نظر پڑ سکے اور دیکهنے والے خودبخود یہ سمجھ سکیں کہ ہمارے سر پہ کون سے والے چوہدری صاحب کا دست شفقت ہے. ہمارﯼ ذہنی پسماندگی اور غلامانہ سوچ کا یہ عالم ہیکہ اپنے اوپر مسلط کئے گئے سیاسی وڈیرے کے قدموں میں بیٹھنا بھی اعزاز سمجھتے ہیں۔ ﻓﮑﺮﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻏﻼﻡ ﮨﻮﻧﮯ کے ﺑﺎﻋﺚ ﮨﻢ ﺁﺝ تک ﺍﭘﻨﮯ ﺩﮐﮭﻮﮞ ﮐﺎ ﻋﻼﺝ بھی ﺍﻧﮩﯽ ﮈﺍﮐﻮﺅﮞ ﺍﻭﺭ ﻟﭩﯿﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻼﺵ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺗﻌﺠﺐ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺻﺮﻑ ﺍﻥ ﭘﮍﮪ ہی ﻧﮩﯿﮟ بلکہ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﯾﺎفتہ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﮐﺜﺮﯾﺖ ﺑﮭﯽ ﻓﮑﺮﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮐﻤّﯽ ﺍﻭﺭ ﻏﻼﻡ ﮨﮯ۔ سب کُچھ خ

ود کر کے جب ہمیں ہمارے حقوق نہ ملیں تو بہانہ یہ کہ ,جی بس اللہ پاک کی مرضی. زیاده دورکی مت سوچیں صرف اتنا بتا دیں کہ کیا ہرضلع کے مقامی چوہدری صاحبان کےلئے ستر سال حکومت میں رهنے کے باوجود اتنا بهی ممکن نہ تها کہ بیت المال کی زمینوں پہ قبضہ کر کے اپنے لیےتاج محلات تعمیر کروانے کے بجائے اپنے اپنے اضلاع میں صرف ایک ایک بہترین ٹورسٹ پوائنٹ بنوا سکتے ۔اچھی سڑکیں بنواتے اور اس سڑک کنارے مختلف پوائنٹ بنے ہوتے. صفائ کا مناسب انتظام ہوتا.کشمیری ثقافت کا فروغ بھی ہوتا اور تحریک کشمیر کی جھلک اور آزادی کا عزم بھی. باہر سے آنے والے لوگوں کا احساس بھی ہوتا کہ کشمیری واقع مہمان نواز اور بہادر قوم ہے۔ سوچیں اگر ایسا ہوتا تو کتنے لوگوں کو با عزت روزگار بهی مل سکتا تها. لیکن عام آدمی کو بنیادئ سہولیات مہیا کرنے کہ بجایے اس کے دماغ میں یہ بات بٹها دی گئ ﮨﮯ ﮐﮧ ﭼﺎﮨﮯ وه ﮐﺘنا ﮨﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﯾﺎﻓتہ ﮐﯿﻮﮞ نہ ﮨﻮ ﺟﺎوئے ﻭﮦ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻦ سکتا بلکہ ﻫﻤﯿشہ ﮐﻤﯽ کا ﮐﻤﯽ ﮨﯽ رہے گا. یقین کیجیے کہ ﺟﺐ ﺗﮏ ہمارا ﻣﻌﺎﺷﺮﺍ ﺍﺱ ذہنی ﻏﻼﻣﯽ ﺳﮯ ﺁﺯﺍﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﺎ، اور ہم لوگ ﺍﭘﻨﮯ ﺫﮨﻦ،ﻋﻘﻞ ﻭ ﻓﮑﺮ ﮐﻮ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟﻻﺋیں گے ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﮨﻢ ﺍﺱ ﻇﻠﻢ ﮐﯽ ﭼﮑﯽ ﻣﯿﮟ ﯾﻮﻧﮩﯽ ﭘﺴﺘﮯ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ. فرمان الہی ہے. لیس الانسان الا ماسعی.( ترجمہ) نہیں ملتا انسان کو مگر جس کی وہ کوشش کرتا ہے. لہذا ہمیں اپنی فرسودہ سوچ کا رخ تبدیل کرتے ہوئے اپنے دگرگوں حالات کو بدلنے کی کوشش کرنی چاہیئے………..!!! بقول اقبال خدا نے آج تک اس قوم کی حالت نہیں بدلی….. جس کو ھو نہ خیال آپ اپنی حالت کے بدلنے کا


About the author

ویب ڈیسک

ویب ڈیسک لکھاری ڈاٹ کام

2 Comments

Click here to post a comment