یہ ایک ہونے کا وقت ہے -عبدالعزیز غوری


صلح کاسفیدجھنڈا کسی قوم کی آزادی اور خودمختاری کا ضامن نہیں ہوسکتا,آزادی کی بھیک مانگنے اور صلح کا سفید جھنڈا لہرانے سے آزادی نہیں ملتی- وہی قوم اپنی آزادی کی حفاظت کرسکتی ہے جس کا اپنا کوئی نظریہ حیات ہو, جس میں قومی غیرت و حمیت اور خودداری ہو, جس کے کھلے سمندر میں اس کے آہن پوش جنگی جہاز جدید اسلحہ سے لیس دشمن کی جارحیت کامنہ توڑ جواب دینے کیلئے تیارہوں.

جسکی فضاؤں میں اسکے لڑاکا طیارے سرحدوں کی نگرانی اور کسی بھی اچانک حملہ کا جواب دینے کیلئے تیار ہوں- جس کی بری فوج مادر وطن کے چپہ چپہ کی حفاطت کیلئے سینہ تان کر سرحدوں پرکھڑی ہو, جس قوم کا بچہ بچہ مادر وطن کی حفاظت کے لئے جان دینے کیلئے تیار ہو, جس کے حکمران انصاف پسند اور عوام کے خیرخواہ ہوں, جس کا دامن ہر قسم کی اخلاقی و مالی کرپشن سے پاک ہو,

جو خزانے اور اپنے اختیار کو امانت سمجھ کر استعمال کرتے ہوں-جس قوم کی مائیں اپنے بیٹوں کی شہادت پر فخر کرتی ہوں,جس کے جوان شہادت کی آرزو لیکر محاذ جنگ پر جاتے ہوں, بیویاں اپنے شوہروں اور بہنیں اپنے بھائیوں کی شہادت پر ناز کرتی ہوں, وہی قوم اپنی آزادی کی حفاظت کرسکتی ہے-

 

دنیا کی بیشتر قوموں نے کمزور قوموں کو اپنا غلام بنانے کیلئے ان پر شب خون مارے ان کے مال و اسباب لوٹ لئے جاتے-انکے مردوں کو غلام عورتوں کو کنیز بنالیاجاتا- دوسروں کی زمینیوں اوروسائل پر قبضہ کرنے کے لئے جنگیں لڑی جاتیں تھیں انکے طاقتور لوگ عیش کی زندگی گذارتے اور عوام جانوروں سے بدتر زندگی گذارنے پر مجبور تھے. آج مسلم قوم کو دنیا کی کافر اور ظالم اقوام کی طرف سے چیلنج کا سامنا ہے,

 

ملت کفر اس بات پر متفق ہے کہ دنیا سے اسلام اور مسلمانون کا نام ونشان مٹا دیا جائے خاص طور پر پاکستان انکا ہدف ہے- وطن عزیز کی سلامتی پر خطرات گہرے سائے منڈلارہے ہیں, ہمارے خلاف امریکہ, اسرائیل اور بھارت کا گٹھ جوڑ ہوچکا ہے ان پر یہ بات عیاں ہوچکی ہے کہ پاکستان معاشی طور پر مفلوج ہورہاہے, بیرونی اور اندرونی قرضوں کا بوجھ اس کی دفاعی پالیسی پر اثرانداز ہورہا ہے جس کی وجہ سے ہماری خارجہ, داخلہ پالیسی بھی متاثر ہورہی ہے-

 

پاکستان بھارت, افغانستان اور ایران کے درمیان گھرا ہوا ہے اگر اس نے ان محاذوں پر توجہ دی تو دہشت گردی کے خلاف جن محاذوں پر آپریشن ضرب عضب اور ردالفساد کے ذریعے کامیابی حاصل کی ہے وہ ضائع ہو جائیں گی اور امریکہ اپنی من مانی کرے گا – یہ وقت ہے کہ ملک کی تمام دینی, سیاسی و قوم پرست جماعتیں, خانقاہوں اور آستانوں کے سجادہ نشین, مدرسوں کے مہتمم اور مدارس کے خطیب, طلباء مزدور اور کسان متحد ہوکر یہ پیغام دیں کہ پاکستان کا بچہ بچہ کٹ مرے گا مگر اپنی سرزمین کی ایک انچ پر بھی کسی کا ناپاک قدم برداشت نہیں کرے گا-

 

یہ وقت ہے کہ ہمارے حکمران اقتدار کی جنگ ختم کریں اور ترکی کے صدر کی طرح عوام کو اعتماد میں لے کر دنیا کو یہ پیغام دیں کہ ہم تمہارے مقابلے میں سیسہ پلائی ہوئی دیوار ہیں, اس وقت ہماری عدالتوں میں سیاستدانوں کے درمیان آپس میں جو کھیل جاری ہے وہ ختم ہونا چاہیئے یہ وقت انتشار کا نہیں اتحاد کا ہے-

 

یہ وقت ہے کہ حکومت امریکی دھمکیوں اور بھارت کی شرارتوں کا بھرپور جواب دے- عوام سے اپیل کرے کہ وہ گھروں سے نکل کر میدان میں آئیں اگر عوام, حکومت اور فوج ایک پیج پر ہونگے تو دشمن خود سرنڈر ہوجائے یا پیچھے ہٹ جائے گا. حکومتوں کا جواب حکومت پوری دلیری کے ساتھ دے اور جب فوج کی باری آئے تو وہ فوج پریس کانفرنس کے بجائے سرحدوں پر دشمن کو بھرپور جواب دے اور عوام انکے شانہ بشانہ ہو اور اپنی صفوں میں چھپے میر جعفر اور میر صادق جیسے کرداروں کو تلاش کرکے کیفرکردار تک پہنچانا ہوگا-

قومی غیرت و حمیت وطن عزیز کی آزادی وخودمختاری اور نظریہ پاکستان پر کسی قسم کی سودے بازی نہیں ہوسکتی اور وقت نے ثابت کیا ہے اور کریگا کہ جو پاکستان سے ٹکرائے ہوگا وہ رسوا و برباد ہوگا- انشاءاللہ


You may also like...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *